بکرمی کیلنڈر کی آج کی تاریخ 2024 اور دیسی مہینوں کے نام

Desi or bikrami calendar month and date today 2024 بکرمی کیلنڈر کی آج دیسی یا پنجابی مہینے کی تاریخ
$ads={1}

برِصغیر پاک و ہند کو یہ اعزاز حاصل ہے کہ اس خطہ زمین کا دیسی کیلنڈر دنیا کے چند قدیم ترین کیلنڈروں میں سے ایک ہے۔ بہت سے بوڑھے لوگوں کو اسلامی کیلنڈر کے مہینوں کے مکمل نام اور عیسوی کیلنڈر کے مہینوں کے نام یاد ہوں یا نہ ہوں پر دیسی کیلنڈر کے مہینوں کے نام یاد ہوتے ہیں۔ اس کیلنڈر کا اصل نام بکرمی کیلنڈر ہے اور یہ پنجابی کیلنڈر، دیسی کیلنڈر، سرائیکی کیلنڈر، دیسی سال اور جنتری کے ناموں سے بھی جانا جاتا ہے۔

کہا جاتا ہے کہ دیسی کیلنڈر کا آغاز 100 قبل مسیح میں اُس وقت کے ہندوستان کے بادشاہ راجہ بِکرَم اجیت کے دور میں ہوا۔ راجہ بکرم کے نام کی وجہ سے یہ کیلنڈر بکرمی کیلنڈر بھی کہلاتا ہے۔ بکرمی یا دیسی کیلنڈر بھی تین سو پینسٹھ (365) دنوں کا ہوتا ہے اور اس کیلنڈر کے 9 مہینے تیس (30) دنوں کے ہوتے ہیں جبکہ ایک مہینہ وساکھ اکتیس (31) دن کا ہوتا ہے اور باقی دو مہینے جیٹھ اور ہاڑ بتیس (32) دن کے ہوتے ہیں۔

آج دیسی مہینے کی تاریخ 5 جیٹھ 2081 بکرمی ہے اور آج کی انگریزی تاریخ 18 مئی 2024 ہے۔ مزید برآں آپ بکرمی کیلنڈر کے مہینوں کا انگریزی یا عیسوی کیلنڈر کے مہینوں سے موازنہ کر کے آنے والے دیسی مہینوں کی تاریخ نیچے دی گئی فہرست کو سمجھ کر معلوم کر سکتے ہیں۔

  • یکم ماگھ - 13 جنوری
  • یکم پھاگن - 12 فروری
  • یکم چیت - 14 مارچ
  • یکم بیساکھ - 13 اپریل
  • یکم جیٹھ - 14 مئی
  • یکم ہاڑ - 15 جون
  • یکم ساون - 17 جولائی
  • یکم بھادروں - 16 اگست
  • یکم اسوج - 15 ستمبر
  • یکم کاتک - 15 اکتوبر
  • یکم مگھر - 14 نومبر
  • یکم پوہ - 14 دسمبر

چونکہ دیسی کیلنڈر برصغیر کے مختلف علاقوں میں جانا جاتا ہے اسی وجہ سے 12 دیسی مہینوں کے نام مختلف علاقائی زبانوں میں تھوڑے مختلف ہیں۔ چونکہ کیلنڈر کو اردو میں تقویم کہا جاتا ہے۔ اس لیے ہم بکرمی کیلنڈر کو بکرمی تقویم بھی کہ سکتے ہیں۔ بکرمی کیلنڈر کا سال وساکھ کے مہینے سے شروع ہوتا ہے جبکہ اسلامی کیلنڈر کا سال محرم کے مہینے سے شروع ہوتا ہے۔ ذیل میں دیسی مہینوں کے نام اور موسم کی مناسبت سے فہرست دی گئی ہے۔

  1. بیساکھ، وساکھ، ویساکھ، وساخ، وسیوک (گرم سرد، مِلا جُلا)
  2. جیٹھ (گرم اور لُو چلنے کا مہینہ)
  3. ہاڑ، ہاڑھ، اساڑھ، آؤڑ (گرم مرطوب، مون سون کا آغاز)
  4. ساون، ساؤن، وأسا (حبس زدہ، گرمی، مکمل مون سون)
  5. بھادوں، بدرو، بدرا، بھادروں، بھادری (معتدل، ہلکی مون سون بارشیں)
  6. اسو، اسوں، اسوج، آسی (معتدل موسم)
  7. کاتک، کَتی، کاتئے (ہلکی سردی)
  8. مگھر، منگھر (سرد موسم)
  9. پوہ (سخت سردی کا مہینہ)
  10. ماگھ، مانگھ، مانہہ، کُؤنزلہ (سخت سردی، دھند)
  11. پھاگن، پھگن، اربشہ (سردی کی شدت میں کمی، سرد خشک ہوائیں، بہار کی آمد)
  12. چیت، چیتر (بہار کا موسم)

بکرمی کیلنڈر یعنی دیسی کیلنڈر میں ایک دن کے آٹھ پہر ہوتے ہیں۔ برصغیر کی علاقائی زبانوں میں آٹھ پہر کو اٹھ پار بھی کہا جاتا ہے اور آج کی جدید گھڑی کے مطابق ایک پہر تین گھنٹوں کا ہوتا ہے۔ مختلف علاقائی زبانوں میں وقت کو "ویلا" کہا جاتا ہے۔ ان پہروں کے نام یہ ہیں:

  1. دھمی دا ویلا: صبح کے اوّلین لمحات، صبح کے 6 بجے سے صبح کے 9 بجے تک کا وقت۔
  2. ڈوپاراں دا ویلا : صبح کے 9 بجے سے دوپہر 12 بجے تک کا وقت۔
  3. پیشی دا ویلا : دوپہر کے 12 بجے سے سہ پہر 3 بجے تک کا وقت۔
  4. دیگر دا ویلا: سہ پہر 3 بجے سے شام 6 بجے تک کا وقت۔
  5. نماشاں دا ویلا: شام کے اوّلین لمحات، شام کے 6 بجے سے لے کر رات کے 9 بجے تک کا وقت۔
  6. کفتاں دا ویلا: رات کے 9 بجے سے رات کے 12 بجے تک کا وقت۔
  7. ادھ رات دا ویلا: رات کے 12 بجے سے سحر کے 3 بجے تک کا وقت۔
  8. اسور دا ویلا: صبح کے 3 بجے سے صبح کے 6 بجے تک کا وقت۔

مجھے امید ہے کہ آپ کو اب دیسی، سرائیکی، پنجابی مہینوں کے نام اور بکرمی کیلنڈر کی تاریخ مکمل طور پر سمجھ آ گئی ہو گی۔

شیئر ضرور کریں
جدید تر اس سے پرانی